اللہ پر توکل اور اُسی سے سب کچھ ہونے کا یقین

اللہ پر توکل اور اُسی سے سب کچھ ہونے کا یقین

اللہ پر یقین کا سفر بے حد حسین ہوتا ہے ،جو اس راہ کے مسافر بن جاتے ہیں، کامیابی ان کا مقدر بن جاتی ہے۔ اللہ پرتوکل اوراس کی ذات پر یقین کا سفر در حقیقت دکھوں بھری زندگی سے پر سکون زندگی کا سفر ہوتا ہے۔ اللہ پر یقین کرنے والوں کو سکونِ قلب کی نعمت میسر ہوتی ہے ۔کیونکہ ان کا یقین ایسی ہستی پر ہوتا ہے ،جو اس پوری دنیا کا بادشاہ اور پالنہار ہے۔ جو انسان و حیوان، فضا میں اُڑنے والے پرندوں، زمین پر بہتے ہوئے دریا و سمندر، بہتے ہوئے پانی میں تیرتی ہوئی رنگ برنگی مچھلیوں حتیٰ کہ اس زمین پر چلتی ہوئی چھوٹی سی چیونٹی کا بھی مالک اور پروردگار ہے ،جس کے حکم’’کن فیکون‘‘ سے مقدر بدل جایا کرتے ہیں۔ اور جانتے ہو ’’یقین‘‘کیا ہے ؟جب زندگی میں غموں کے گہرے بادل ہوں روشنی کی امید نہ ہو،جب صحرا میں بھٹکنے والے مسافر کو ایک بوند پانی کی امید نہ ہو،جب زندگی میں خزاں ہی خزاں ہو، بہار کی کوئی امید نہ ہو اس وقت دل سے یہ آواز آنا پریشان نہ ہوں’’اللہ ہے نا‘‘۔

اللہ پر یقین تو سمندر سے بھی زیادہ گہرا ہونا چاہیے ۔جتنے بھی مشکل حالات ہوں جتنے بھی اندھیرے ہوں زندگی میں پھر بھی توکل صرف اللہ پر ہونا چاہئے کہ ایک دن اس اندھیرے میں روشنی کی کرن ضرور چمکے گی۔جو اللہ کی عظیم ذات پر کامل یقین رکھتے ہیں ،فلاح و کامیابی بھی انہی کے لئے ہوا کرتی ہے۔ تقدیریں بھی انہی کی بدلا کرتی ہیں۔ حضرت عمر بن الخطابؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:اگر تم اللہ پر اس طرح توکل اور بھروسا کرو جس طرح توکل کرنے کا حق ہے ۔تو وہ تمہیں اس طرح رزق دے گا جیسے پرندوں کو رزق دیتا ہے ۔پرندے صبح سویرے خالی پیٹ نکلتے ہیں اور شام کو بھرے پیٹ واپس آتے ہیں۔(سنن ترمذی:2344،باب فی التوکل علیٰ اللہ)

جب انسان اپنے رب پر اس قدر بھروسا کر لیتا ہے کہ اس کے علاوہ کوئی بھی اس کی ضرورت پوری کرنے والا نہیں تواللہ بھی اپنے بندے کو مایوس نہیں لوٹاتا۔ جو لوگ اللہ کے در کو چھوڑ کر دوسروں کے در سے مانگتے ہیں، کیا انہیں اللہ کی ذات پر تھوڑا سا بھی یقین نہیں ؟ کیا انہیں اس دنیا کے لوگوں پر اللہ کی ذات سے زیادہ بھروسا ہے ؟جو ذات رات کو درختوں پر بیٹھے ہوئے پرندوں کو نیند میں بھی نیچے گرنے نہیں دیتی، وہ ذات انسان کو بے یارو مددگار کیسے چھوڑ سکتی ہے؟اللہ پاک کی ذات تو رحیم و کریم ہے انسان کو اس کی سوچ سے بڑھ کر عطا کرنے والی۔

اللہ تو فرماتا ہے: اے میرے بندو ،مجھ سے مانگو، میں تمھیں عطا کروں گا اور عطا بھی ایسا کہ انسان حیران رہ جائیں،لیکن ہم انسان ہی بے وفا ہیں جو در در پر جا کر سر جھکاتے ہیں۔ اللہ کو چھوڑ کر اللہ کے بنائے ہوئے بندوں سے مانگتے ہیں۔ اللہ پر یقین کے معاملے میں زیادہ سوچا مت کرو، آنکھیں بند کر کے یقین کر لیا کرو، کیونکہ یہی وہ راستہ ہے جہاں فلاح وکامیابی نصیب ہوتی ہے۔ یہی وہ راستہ ہے جہاں پر کامیابی انسان کا مقدر بن جاتی ہے۔ یہی وہ راستہ ہے جہاں دنیا و آخرت سنور جاتی ہے ۔اللہ تو قادر مطلق اور بے نیاز ہے۔انسان کی سب خواہشات پوری کرنے پر قادر۔بس اللہ کی ذات پر کامل یقین ہونا چاہئے۔

اللہ کی ذات پر یقین حضرت ابراہیم علیہ السلام جیسا ہونا چاہئے جن کے توکل کے ذریعے آگ ٹھنڈی کر دی گئی۔ اللہ پر توکل حضرت موسیٰ علیہ السلام جیسا ہونا چاہئے جو دریا میں بھی راستہ بنوا دیتا ہے۔ اللہ پر توکل تو یوسف علیہ السلام کو یعقوب علیہ السلام سے ملوا دیتا ہے۔ اللہ پر توکل تو شدید طوفان میں بھی کشتیِ نوح پار لگا دیتا ہے۔ تو کیا ہم اپنے رب پر توکل نہیں کریں گے جو نا ممکن کو ممکن کرنے کی قدرت رکھتا ہے۔

ہمیشہ اپنی عقل سے زیادہ اللہ کی ذات پر بھروسا کرو کیونکہ اللہ پر پختہ یقین سخت اندھیرے میں بھی روشنی پیدا کر دیتا ہے۔ اللہ پاک کہیں نہ کہیں سے راستہ نکال ہی دیتا ہے، کیونکہ اللہ پاک اپنے بندوں کو پریشان نہیں دیکھ سکتا۔ وہ تو ایسی جگہوں سے انسان کو نوازتا ہے کہ انسان تصور بھی نہیں کر سکتا۔دعائیں معجزوں کا باعث بنتی ہیں اوررب کے حکم ’’کن فیکون‘‘ سے تقدیر بدل جایا کرتی ہے پس صبر اور اللہ پر بھروسا ضروری ہے۔

اللہ پر یقین اتنا کامل ہونا چاہئے کہ اللہ کبھی بھی دوسرا دروازہ کھولے بغیر پہلا دروازہ بند نہیں کرتا۔ اگر اللہ پر یقین پختہ ہو جائے تو معاشرے سے بہت سے گناہوں کا خاتمہ ہو جائے۔ اگر اس بات پر یقین آجائے کی قسمت میں لکھا ہوا رزق کسی دوسرے کے پاس نہیں جاسکتا تو کبھی انسان دوسرے کے حق پر ڈاکا نہ ڈالے۔ کبھی قتل جیسا کبیرہ گناہ نہ ہو۔ کبھی یتیموں کا مال نہ ہڑپ کیا جائے۔

اللہ پر یقین کرنے والے کبھی بھی زندگی کی مشکلات سے گھبرایا نہیں کرتے۔زندگی میں چھائے ہوئے غموں کے بادلوں سے پریشان نہیں ہوا کرتے۔ کیونکہ ان کا یقین واحدویکتا رب پر ہوتا ہے ،جہاں بڑی سے بڑی مشکل بھی آسان ہو جایا کرتی ہے۔ غموں کے چھائے ہوئے بادل خوشیوں کی کرنوں میں بدل جایا کرتے ہیں۔ جب دل اللہ کی رضا پر راضی رہنے اور شکر کرنے کی عادت ڈال لے تو سکون مقدر بن جاتا ہے ۔’’جن کا بھروسا اللہ پر ہو…ان کی منزل فلاح و کامیابی ہے ‘‘۔

ایک جامع فرمان…!

دو یہودی نبی کریمﷺ کی بارگاہ میں حاضر ہوئے، ان سے مخاطب ہوتے ہوئے آپ ﷺ نے فرمایا: ٭…اللہ تعالیٰ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو۔ ٭…چوری نہ کرو۔٭… زنا نہ کرو۔ ٭…جس جان کو اللہ عزوجل نے حرام کیا، اسے ناحق قتل نہ کرو۔٭… جو جرم سے بری ہو، اسے قتل کے لیے بادشاہ کے پاس لے کر نہ جاؤ۔٭… جادو نہ کرو۔٭… سود نہ کھاؤ۔٭…پاک دامن (عورت) پر زنا کی تہمت نہ لگاؤ۔٭… اور جہاد کے موقع پر منہ پھیر کر نہ بھاگو اور خاص تم یہودی ہفتے کے دن سے تجاوز نہ کرو۔ (سنن ترمذی)

’’سچائی‘‘ جنّت اور نجات کا راستہ…!

حضرت عبداللہ بن مسعود ؓ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ نے فرمایا: بلاشبہ، سچ نیکی کی طرف رہنمائی کرتا ہے اور نیکی جنت کا راستہ دکھاتی ہے، آدمی سچ بولتے بولتے ’’صدیق‘‘لکھا جاتا ہے، جب کہ جھوٹ برائی کی طرف رہنمائی کرتا ہے ، برائی آگ کا راستہ دکھاتی ہے اور آدمی جھوٹ بولتے بولتے کذّاب (بہت جھوٹ بولنے والا) لکھا جاتا ہے۔ (صحیح بخاری)

Share This:

اسلامی مضامین

  • 13  اپریل ،  2024

مفتی محمد راشد ڈسکویآج کل ہر طرف مہنگائی کے از حد بڑھ جانے کے سبب ہر بندہ ہی پریشان نظر آتا ہے، کسی بھی مجلس میں شرکت کی...

  • 13  اپریل ،  2024

مولانا نعمان نعیمرسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا: جس شخص نے ایک بالشت برابر زمین بھی ظلماً لی ، قیامت کے دن اُسے سات زمینوں...

  • 12  اپریل ،  2024

حضرت اوس بن اوس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: دنوں میں سب سے افضل دن جمعہ کا دن...

  • 11  اپریل ،  2024

حضرت ابوذر غفاری رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:یہ بیچارے غلام اور ملازم...

  • 10  اپریل ،  2024

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جو شخص لوگوں کے احسان کا شکریہ...

  • 10  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلم.حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ کا بیان ہے۔ انہوں نے فرمایا :دعا آسمان اور زمین کے...

  • 09  اپریل ،  2024

حضرت انس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ’’جب شب قدر آتی ہے تو جبرئیل علیہ...

  • 09  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلمحضرت ابو اُمامہ رضی اللہ عنہٗ کا بیان ہے کہ جناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے...

  • 09  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلمحضرت عبداللہ بن بریدہ رضی اللہ عنہٗ اپنے والد سے نقل کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ...

  • 08  اپریل ،  2024

مولانا سیّد سلیمان یوسف بنوریآپ کے مسائل اور اُن کا حلسوال: ہمارا گاڑیوں کی خریدوفروخت کا کاروبار ہے۔ ایک اور شخص ب نئی...

  • 08  اپریل ،  2024

ماہ شوال کے چھ روزے، جو شوال کی دُوسری تاریخ سے شروع ہوتے ہیں، مستحب ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:...

  • 08  اپریل ،  2024

حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے، فرماتی ہیں کہ جب رمضان کا آخری عشرہ آتا تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پوری...

  • 08  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلمجناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشادِ مبارک ہے، جو شخص عید کے دن تین سو مرتبہ سبحان...

  • 07  اپریل ،  2024

مفتی محمد مصطفیٰحضرت سہل بن سعدؓ سے مروی ہے کہ نبی اکرم ﷺنے فرمایا :’’میری امت کے لوگ بھلائی پر رہیں گے، جب تک وہ روزہ...

  • 07  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلمحضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :جو...

  • 07  اپریل ،  2024

ارشاداتِ نبوی صلی اللہ علیہ وسلمحضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے:...

  • 07  اپریل ،  2024

مولانا نعمان نعیم’’زکوٰۃ‘‘ اسلام کےبنیادی ارکان میں سے ایک اہم رکن ہے۔ قرآن وسنت میں زکوٰۃ کی فرضیت اور فضیلت و...

  • 06  اپریل ،  2024

سید صفدر حسینامام موسیٰ کاظمؒ، حضرت امام جعفر صادقؒ کے صاحبزادے ہیں۔ آپ کی والدہ ماجدہ حمیدہ بربریہ اندلسیہ تھیں۔ آپ...

  • 06  اپریل ،  2024

مولانا اطہرحسینیو ں تو اس کارخانۂ عالم کی سب ہی چیزیں قدرت کی کرشمہ سازیوں اور گلکاریوں کے ناطق مجسمے، اسرارورموز کے...

  • 06  اپریل ،  2024

حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تکیہ کا سہارا لگائے بیٹھے...